Please enable JavaScript to see daily hadith

لیلۃ القدر/شب قدر کی اہمیت و فضیلت

لیلۃ القدر بڑی عزت و حرمت کی رات ہے۔ اسی رات میں اللہ کا آخری کلام قرآن مجید لوح محفوظ سے سماء دنیا کی طرف اترا۔ اس رات کی عبادت ہزار مہینوں کی عبادت سے بہتر ہے۔ ارشاد باری ہے : إِنَّا أَنْزَلْنَاهُ فِي لَيْلَةِ الْقَدْرِ ٭ وَمَا أَدْرَاكَ مَا لَيْلَةُ الْقَدْرِ ٭ لَيْلَةُ الْقَدْرِ خَيْرٌ مِنْ أَلْفِ شَهْرٍ ٭ تَنَزَّلُ الْمَلَائِكَةُ وَالرُّوحُ فِيهَا بِإِذْنِ رَبِّهِمْ مِنْ كُلِّ أَمْرٍ ٭ سَلَامٌ هِيَ حَتَّى مَطْلَعِ الْفَجْرِ [القدر : 1۔ 5 ] ’’ یقیناًً ہم نے اس (قرآن) کو شب قدر میں نازل فرمایا، آپ کو کیا معلوم کہ شب قدر کیا ہے ؟ شب قدر ایک ہزار مہینوں سے بہتر ہے۔ اس (میں ہر کام )کے سرانجام دینے کو اپنے رب کے حکم سے فرشتے اور روح (جبرائیل) اترتے ہیں۔ یہ رات سراسر سلامتی کی ہوتی ہے اور فجر کے طلوع ہونے تک (رہتی ہے )۔ “ اس لیے ہر مسلمان کو چاہئے کہ وہ اس رات میں تسبیح و تہلیل، ذکر و عبادت، تلاوتِ قرآن اور صلاۃ تراویح کے ذریعہ اللہ کا تقرب حاصل کرے۔ اللہ کے نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے اس رات میں کثرت سے : اللهم إنك عفو تحب العفو فاعف عني [مسند أحمد، مسند عائشه باب 17 ] ’’ اے اللہ تو بڑا معاف کرنے والا ہے معافی کو پسند کرتا ہے، پس میرے گناہوں کو معاف فرما دے۔ “ پڑھنے کی تعلیم دی ہے، عائشہ رضی اللہ عنہا نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے عرض کیا کہ اگر میں شبِ قدر پاؤں تو کیا پڑھوں تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے یہی دعا سکھائی۔ لیلۃ القدر جو اتنی فضیلت والی رات ہے اس کو پانے کے لیے آدمی کی تلاش کب ہو اس بارے میں احادیث سے معلوم ہوتا ہے کہ اس کو رمضان کے آخری عشرہ کی طاق راتوں میں تلاش کیا جائے۔ صحیح بخاری اور صحیح مسلم میں عائشہ رضی اللہ عنہا سے درج ذیل حدیث مروی ہے۔ صحیح مسلم کے الفاظ یوں ہیں : قال رسول الله صلى الله عليه وسلم : تحرواليلة القدر فى العشر الأواخر من رمضان [صحيح مسلم : كتاب الصيام، باب فضل ليلة القدر و الحث على طلبها ] ’’ اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ لیلۃ القدر رمضان کے آخری عشرہ میں تلاش کرو۔ “ جب کہ صحیح بخاری میں طاق راتوں کی صراحت ہے : أن رسول الله صلى الله عليه وسلم قال : تحرواليلة القدر فى الوتر من العشر الأواخر من رمضان [صحيح البخاري : كتاب فضل ليلة القدر باب تحري ليلة القدر فى الوتر من العشر الأواخر ] ’’ اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ لیلۃ القدر رمضان کے آخری عشرہ کی طاق راتوں میں تلاش کرو۔ “ نیز ابوسعید خدری رضی اللہ عنہ سے بھی ایک روایت یوں مروی ہے : . . . قال (النبي صلى الله عليه وسلم) إني أريت ليلةالقدر ثم أنسيتهافالتمسوهافي العشر الأواخر فى الوتر . . . الحديث [صحيح البخاري : كتاب فضل ليلة القدر، باب التماس ليلة القدر فى السبع الأواخر، صحيح مسلم : كتاب الصيام باب فضل ليلة القدر و الحث على طلبها ] ’’ (نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے ) فرمایا کہ مجھے لیلۃ القدر (رات کی تعیین کے ساتھ) دکھائی گئی پھر بھلا دی گئی (بھلائے جانے کاسبب دو آدمیو ں کا جھگڑا تھا جیسا کہ بعض روایات سے معلوم ہوتا ہے ) لہٰذا تم اسے آخری عشرہ کی طاق راتوں میں تلاش کرو۔ “ مذکورہ احادیث سے معلوم ہوتا ہے کہ لیلۃ القدر رات کی تعیین کے بغیر رمضان کے آخری عشرہ کی طاق راتوں میں سے کسی ایک رات میں ہوتی ہے لہٰذا اسے تمام طاق راتوں میں تلاش کرنا چاہئے۔ بعض لوگوں نے اس کو ستائیسویں رات کے ساتھ خاص کر رکھا ہے جو کسی طور بھی صحیح نہیں، بعض احادیث میں ستائیسویں رات کا تذکرہ آتا ضرور ہے لیکن یہ ویسے ہی ہے جیسے دیگر روایات میں دوسری راتوں کا تذکرہ ہے۔ نیز ممکن ہے اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی حیات مبارکہ میں کسی سال لیلۃ القدر ستائیسویں رات کو ہوئی ہو۔ لہٰذا اس سے یہ نتیجہ نکالنا کہ لیلۃ القدر ستائیسویں رات کو ہی ہوتی ہے درست نہیں۔ اور مذکورہ فرامین رسول کی روشنی میں آخری عشرہ کی تمام طاق راتوں میں اس کی تلاش ہونی چاہئے۔ آخری عشرہ میں شب بیداری کی مروجہ صورتیں یعنی وعظ و تقریر کا اہتمام، شبینے، صلوۃ التسبیح باجماعت، دعاء ختم قرآن کا اہتمام، چراغاں اور زیادہ لائٹیں جلانا، اس موقع پر شیرینی کی تقسیم وغیرہ کا ثبوت خیر القرون میں نہیں بلکہ ائمہ سلف سے ان چیزوں کی ممانعت منقول ہے۔ امام ابوبکر محمد بن ولید طرطوشی (متوفی 520ھ) لکھتے ہیں : لم يرووافي شئ من ذلك ما أحدثه الناس من هذه البدع نصب المنابر عند ختم القرآن و القصص وغيره ابل قد حفظ النهي عن ذلك [كتاب الحوادث و البدع 52 ] ’’ یعنی محدثین نے کتب ستہ وغیرہ میں ایسی کوئی روایت بیان نہیں کی کہ رمضان میں ختم قرآن کے موقع پر وعظ کیے جائیں اور اس کے بعد بلند آواز سے لمبی لمبی دعائیں کی جائیں بلکہ ائمۂ سلف سے تو ان چیزوں کی ممانعت منقول ہے۔ “

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

WP2Social Auto Publish Powered By : XYZScripts.com
Follow by Email
YouTube